Templates by BIGtheme NET
Home » fehmiology » ہنگامی نگارشات

ہنگامی نگارشات

ہنگامی نگارشات

(حصہ اول)

لکھنے کا آغاز ہم نے اردو سے ہی کیا تھا مگر غمِ دوراں کی گھمن گھمیریوں نے ہمیں انگریزی کی بھول بھلیوں میں یوں لا پٹخا کہ ہم اپنی سدھ بدھ کھو بیٹھے۔ چار و ناچار ہمیں اسی بدیسی زبان کے دامنِ دریدہ میں پناہ لینا پڑی۔۔۔

لیکن اصل قصہ کچھ اور ہے صاحبو۔۔۔

اس سارے فساد کی جڑ و نقطہَ ماسکہ اسماء بدر کی ایک ہمہ جہت، طوفانی و طولانی اردو تحریر تھی۔ انہوں نے ادبی پند و نصائح کا تیا پانچا کر کے ہنگامی نگارشات کا ایسا طومار باندھا کہ ساری قوم ان کے شانہ بشانہ اس عظیم ذمہ داری سے عہدہ براہ ہونے کے لیے میدانِ عمل میں کود پڑی۔ اس ہنگامی تحریر نے سب کے ادبی و غیر ادبی شعور کو جھنجھوڑ بلکہ للکار کر رکھ دیا۔ ہر خاص و عام لکھاری کو اپنے اپنے شہپارے تخلیق کرنے کی ایک نئی جہت سے روشناس ہونے کی فکر پڑ گئی۔

بس جی پھر کیا تھا ساری قوم حسبِ دستور دیوانہ وار اس ہلڑ بازی بلکہ شو بازی کے کارِ خیر میں حصہ لینے کو برسر پیکار ہو گئی۔ اس مرقع کے پیچھے پڑ کر سب نے اردو کی ہڈی پسلی ایک کی۔ جب ہم نے دیکھا کہ صورتحال قابو سے باہر ہو چکی ہے تو ہماری قومی زبان سے متعلق رگِ حمیت پھڑک اٹھی۔ ہم نے آؤ دیکھا نہ تاؤ، خم ٹھونک کر اس میدانِ کازار میں کود پڑے۔

اس ضمن میں ہماری اردو تخلیقات کا یہ ادبی شہکار ملاحظہ فرما کر سر دھنیں۔ اب یقیناً اطراف و جوانب میں ہاہاکار مچ جائے گی۔۔۔ آخر کو ہم چائے کی پیالی میں طوفان اٹھانے میں ید طولٰی رکھتے ہیں۔۔۔ مگر ساتھیو آپ نے گھبرانا نہیں ہے۔ اس کے پیچھے کی کہانی بھی جلد آ رہی ہے۔ اس سیلِ رواں کو اب کوئی مائی کا لعل روکنے کی جراَت کر کے تو دکھائے۔

تحریر: فہمیدہ فرید خان

بتاریخ ۲۰ ستمبر ۲۰۱۶

#The_Fehmiology

#FFKha

#FFK

About Fehmeeda Farid Khan

A freelancer, blogger, content writer, translator, tour consultant, proofreader, environmentalist, social mobilizer, poetess and novelist. As a physically challenged person, she extends advocacy on disability related issues. She's masters in Economics and Linguistics along with B.Ed.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*