Home » Book & Literature Review » زرد پتوں کی بہار – رام لعل – اردو تبصرہ

زرد پتوں کی بہار – رام لعل – اردو تبصرہ

زرد پتوں کی بہار

تبصرۂ کتب

زرد پتوں کی بہار از رام لعل

سدرہ جاوید کا تبصرہ

Follow
User Rating: 4.09 ( 2 votes)

زرد پتوں کی بہار

پاکستان کے قیام اور ہجرت کی جب بھی بات کی جاتی ہے تو عموماً ہم مسلمانوں پر ڈھائے گئے مظالم کا ذکر ہی سنتے ہیں۔ کیسے انہیں وہاں سے سب چھوڑ کر بے سروسامانی کے عالم میں آنا پڑا۔ ان پر ڈھائے گئے مظالم یقیناً الم ناک تھے۔ مگر ہم اکثر یہ بات نظر انداز کر دیتے ہیں کہ اس طرف سے جو لوگ ہندوستان گئے ان پر بھی ظلم کیا گیا۔ انہیں بھی قتل و غارت کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ انہیں بھی اپنا گھر بار چھوڑ کر ایک اجنبی دیس جا کر بسنا پڑا تھا۔ ملک بدر ہونا پڑا تھا۔ مگر ان کے دلوں میں آج بھی اس ملک سے محبت ایک کسک بن کر زندہ ہے۔ یہی ”زرد پتوں کی بہار“ کی اساس ہے۔

~


زرد پتوں کی بہار ایک منفرد سفرنامہ ہے۔ عام طور پر سفرنئی کسی نٸی جگہ کے بارے میں ہوتا ہے مگر یہاں رام لعل پرانی یاد جینے پاکستان آئے ہیں۔ تیس پینتیس برس بعد ریل گاڑی قدم باہر رکھتے ہی یادوں کی پٹاری کھل جاتی ہے۔ یہ وہی جگہ تھی، جہاں انہوں نے پہلی ملازمت شروع کی تھی۔

سب کچھ وہیں تھا بھی اور کچھ نہیں بھی تھا۔ سب کچھ ویسا ہی تھا اور بہت کچھ بدل بھی گیا تھا۔ مگر ایک چیز جو نہیں بدلی تھی وہ تھی دوستوں کی محبت۔ پرجوش استقبال سے لے کر دورانِ قیام ملنا ملانا اور دعوتوں کے سلسلے رہے۔ پھر جہاں دوست ہوں وہاں قہقہے تو لازم ہیں۔ رام لعل کے دوستوں میں قد آور ادبی شخصیات شامل ہیں۔ زرد پتوں کی بہار کی بدولت ان کا نیا روپ دیکھنے کو ملا جو دلچسپ رہا۔

~


رام لعل نے اپنے قیام کے دوران مختلف شہروں کا دورہ کیا۔ زرد پتوں کی بہار میں ان کے آبائی شہر میانوالی کا قصہ سب سے دل سوز ہے۔ انہوں نے اپنے گھر کی یاترا کی جہاں اب اجنبی لوگ بستے ہیں۔ گھر کا نقشہ بہت حد تک تبدیل ہو چکا ہے مگر اس کی مٹی کی خوشبو اب بھی ویسی ہی ہے۔ وہ لمحہ بہت دل گرفتہ کر گیا جب رام لعل نے کہا کہ اس نسل کا میں آخری فرد ہوں جو اس گھر سے دلی وابستگی رکھتا ہے۔ وہ گھر جہاں ان کے باپ دادا رہے۔ آخر میں اس صحن کی تھوڑی سی مٹی ایک قیمتی متاعِ حیات کی طرح لے کر واپس لوٹ گئے۔
زرد پتوں کی بہار وطن سے وطن تک کا سفر ہے۔ جو اپنے اندر محبت، دوستی، غم اور خوشی کو بہت خوبصورتی سے سموئے ہوئے ہے۔ یہ یقیناً ایک دل کو چھو لینے والی کتاب ہے۔ اسے ضرور پڑھیے۔

سدرہ جاوید کا گزشتہ تبصرہ

Someone We Know

About Sidra Javed

Sidra Javed is a home maker yet reading enthusiast. She loves reading different genres and likes to share her views with others, hoping this will inspire others to take up reading books. On the contrary she's interested in Calligraphy and Art too. She loves adding creativity and delicacy in food.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *