Templates by BIGtheme NET
Home » Fehmiology » Book Reviews » جدوں وِچھڑن یار دِلاں دے از نایاب جیلانی

جدوں وِچھڑن یار دِلاں دے از نایاب جیلانی

جدوں وچھڑن یار دلاں دے از نایاب جیلانی

تبصرہ از فہمیدہ فرید خان

ماہنامہ پاکیزہ جولائی ۲۰۲۲ء

کچھ عرصہ سے دماغ عجیب گھن چکر بنا ہوا تھا۔ اس پر آنکھوں کے ڈاکٹر نے اسکرین سے ربط کم سے کم رکھنے کا مشورہ دے کر دہلا دیا۔ عینک کا نمبر مزید گر گیا تھا۔ اس دوران پڑھنا لکھنا مکمل موقوف رہا۔ مابدولت دو دن پریشان رہ کر تیسرے دن اپنی ازلی ”دفع مارو“ پالیسی پر گامزن ہو گئے۔ وہی سوچ کہ جو ہونا ہو گا، ہو جائے گا اور واپس روٹین پر۔۔۔ سو آج کل آنلائن جاب سرچنگ کے ساتھ پڑھنے کا کھاتہ بھی کھول لیا گیا ہے۔

رات کو آبان نے نایاب جیلانی کے ناول پر پوسٹ کی تو اسی ناول پر ہاتھ صاف کرنے کا سوچا۔ جب ناول پڑھنا شروع کیا تو مجھے نیند آ گئی۔ ناول کی وجہ سے نہیں بلکہ کل احمد (بھانجا) کی دیکھ بھال کر کے تھک گئی تھی۔ دیکھ بھال سے زیادہ میں اس کے مسلسل رونے سے پریشان ہوتی ہوں۔ خیر باقی ناول تھوڑی دیر پہلے پڑھا۔

نایاب جیلانی اچھا لکھتی ہیں اور مجھے ان کا لکھا پسند بھی آتا ہے۔ اسی لیے میں نے فوراً یہ پنجابی نام والا اردو ناول پڑھنا شروع کر دیا تھا۔

جدوں وِچھڑن یار دِلاں دے کی لفاظی بہت اچھی تھی، مرکزی خیال بھی اچھا تھا۔ پڑھتے ہوئے مزہ بھی آیا لیکن کچھ باتوں پر بہت جھنجھلاہٹ ہوئی۔

ہر کردار سوچتا بہت تھا اور باآوازِ بلند سوچتا تھا۔ وہ خود کلامی میں اتنا محو ہو جاتا تھا کہ متعلقہ فرد سب کچھ سن لیتا تھا لیکن اس کے کان پر جوں تک نہ رینگتی تھی۔۔۔ تاہم باقی معاملات وہیں کے وہیں رہتے تھے یعنی ہیرو اپنے خیالات سے دستبردار ہونے کو تیار تھا نہ ہیروئین۔

سلطان ہیرو تھا لیکن اس کے مکالمے انتہائی کم تھے۔۔۔ وہ بھی ہیروئین کے ساتھ نہیں بلکہ منگیتر کے ساتھ۔۔۔ اس سے زیادہ تو سعد (سائیڈ ہیرو) کا کردار تھا۔

حنادے اور سدوری (اس سے مجھے ہمدرد کی سدوری، کھانسی کا شربت ہی یاد آیا۔۔۔ #اچھا_سوری) ایک دوسرے کے خیالات پڑھ لیتی تھیں۔ یہی حال سبیل کا تھا بلکہ ہر ایک کردار کا۔

سب کردار نفسیات اور ٹیلی پیتھی پر مکمل عبور رکھتے تھے۔ ان کو پہلے سے پتہ چل جاتا تھا کہ اگلا کیا کہنے جا رہا ہے۔

کہانی بھاگ رہی تھی لیکن کہانی وہیں تھی۔ یہ میں کیوں کہہ رہی ہوں، یہ پڑھنے والا ہی سمجھ سکتا ہے۔۔۔ آپ اس کو لمبی چھوڑ قسم کی کہانی کہہ سکتے ہیں۔

سب سے زیادہ حصہ آپا کمال کے خاندان کا تھا۔۔۔ اور سب سے زیادہ زورِ بیان طوائفوں کے رکھ رکھاؤ پر صرف کیا گیا۔

بنیادی طور پر ہر کردار میں خوبیاں ہی خوبیاں کوٹ کوٹ کر بھر دی گئی تھیں، سوائے جھومر کے۔

جلدی جلدی لپیٹ کر اچانک سب اچھا کرنا بھی ایک عجیب گورکھ دھندہ تھا۔

آخری بات اردو ناول کا ٹھیٹھ پنجابی نام ”جدوں وِچھڑن یار دِلاں دے“ کچھ جچا نہیں۔ کہانی اچھا پاس ٹائم بن سکتی ہے اگر آپ ”سب اچھا ہے“ پڑھنا چاہتے ہیں۔

بتاریخ ۲۱/۰۷/۲۰۲۲

#The_Fehmiology

#FFKhan

#FFK

About FFK

A freelancer, blogger, content writer, translator, tour consultant, proofreader, environmentalist, social mobilizer, poetess and novelist. As a physically challenged person, she extends advocacy on disability related issues. She's masters in Economics and Linguistics along with B.Ed.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*